Mai Ise Chahta Tou Hun

/Ghazal/Heart Touching Shayari/Wafa Shayari/

Mai Ise Chahta Tou Hun
Magar Ehtram-e-Izhaar Nahi Kar Sakta
Mai Tere Is Badan Ko
Mohabbat Ka Naam De Kar Aludah Nahi Kar Sakta
Jitna Bhi Kamiyab Ho Jaye
Ab Murshid Ka Mukabla Tou Nahi Kar Sakta
Ali Ko Janne K Lie Bhi Ali Chahiye
Ab Har Shaks Bhi Tou Ali Ali Nahi Kar Sakta
Mai Yazeed Ka Sath De Kar
Aal-Muhammad Se Daga Nahi Kar Sakta

میں اسے چاہتا تو ہوں
مگر احترام اظہار نہیں کر سکتا
میں تیرے اس بدن کو
محبت کا نام دے کر آلودہ نہیں کر سکتا
مرید جتنا بھی کامیاب ہو جاۓ
اب مرشد کا مقابلہ تو نہیں کر سکتا
علی کو جاننے کیلۓ بھی علی چاہیۓ
اب ہر شخص بھی تو علی علی نہیں کر سکتا
میں یزید کا ساتھ دے کر
آل محمد سے دغا نہیں کر سکتا

Ab Bhi Doobti Kashti Ko Paar Lagaya

/Ghazal/

Ab Bhi Doobti Kashti Ko Paar Lagaya Jaa Sakta Hai
Inn Jaahil Hukmarano Ke Takht Ko Giraya Jaa Sakta Hai
Gaz Inka Takjt o Taaj Ultaa Nahi Sakte
Magar In Ki Hukmarani Ko Toh Jhutlaya Jaa Sakta Hai
Zaruri Toh Nahi Hum Bhi Kaatein Hijr o Wasaal
Teri Jagah Kisi Aur Ko Bhi Toh Apnaya Jaa Sakta Hai
Yeh Tera Haseen Khad o Khaal Yeh Haseen Zulfein
Kyun Uljhein In Mein Inko Jalaya Bhi Toh Jaa Sakta Hai
Chand Jaahil Muthad Ho Kar Samajhte Hain
Ke Mujh Daana Ko Haraya Jaa Sakta Hai
Agarche Kuch Khas Nahi Apna Andaz e Bayaan
Magar Phir Bhi Haal e Dil Sunaya Jaa Sakta Hai

اب بھی ڈوبتی کشتی کو پار لگایا جا سکتا ہے
ان جاہل حکمرانوں کے تخت کو گرایا جاسکتا ہے
گر انکا تخت و تاج الٹا نہیں سکتے
مگر ان کی حکمرانی کو تو جھٹلایا جاسکتا ہے
ضروری تو نہیں ہم بھی کاٹیں ہجر و وصال
تیری جگہ کسی اور کو بھی تو اپنایا جا سکتا ہے
یہ تیرا حسیں خدوخال یہ حسیں زلفیں
کیوں الجھیں ان میں انکو جلایا بھی تو جا سکتا ہے
چند جاہل متحد ہو کر سمجھتے ہیں
کہ مجھ دانا کو ہرایا جاسکتا ہے
اگرچہ کچھ خاص نہیں اپنا اندازِ بیاں
مگر پھر بھی حال دل تو سنایا جاسکتا ہے